11

لاڑکانہ(رپورٹ:عطاء اللہ بروہی ) غریب دیہاڑی دار اپنے بچوں سمیت پریس کلب رتو ڈیرو پہنچ کر اپنے بااثر چچازاد بھائی کے بیٹے کے خلاف پاک کتاب اٹھا کر احتجاج کیا ۔ تفصیلات کے مطابق جیکب آباد ضلع کے گاؤں قادر بخش مگریو بیگاری پل کے باشندہ غریب دیہاڑی دار علی بہار مگریو اپنے بااثر چچازاد بھائی کے بیٹے کے خلاف پاک کتاب اٹھا کر اپنے بچوں سمیت پریس کلب رتو ڈیرو کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا ۔

لاڑکانہ(رپورٹ:عطاء اللہ بروہی )
غریب دیہاڑی دار اپنے بچوں سمیت پریس کلب رتو ڈیرو پہنچ کر اپنے بااثر چچازاد بھائی کے بیٹے کے خلاف پاک کتاب اٹھا کر احتجاج کیا ۔
تفصیلات کے مطابق جیکب آباد ضلع کے گاؤں قادر بخش مگریو بیگاری پل کے باشندہ غریب دیہاڑی دار علی بہار مگریو اپنے بااثر چچازاد بھائی کے بیٹے کے خلاف پاک کتاب اٹھا کر اپنے بچوں سمیت پریس کلب رتو ڈیرو کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا ۔
اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میرے چچازاد بھائی کے بااثر بیٹے زاہد مگریو اپنے بیٹے کے اغوا کا مقدمہ میرے خلاف داخل کراکے مجھے جھوٹے مقدمات میں بلاجواز پھنسا کر میرا جینا جھنجھا کر رکھا ہے ۔
انہوں نےکہا کہ بااثر چچازاد بھائی کے بیٹے کچھ ماہ پہلے دریاء میں ڈوب کر فوت ہو گیا ہے جس کا گاؤں والوں کو بھی معلوم ہے ۔
انہوں نےکہا کہ پولیس بڑی رشوت لیکر ان سے ملکر مجھے ہراساں کررہی ہے جس وجہ سے میں اپنے بال بچوں سمیت دربدر کی ٹھوکریں کھا رہا ہوں اور میری زندگی مفلوج ہوکر رہ گئی ہے ۔
انہوں نے کہا کہ اس سے پہلے بااثر نے مجھے شکارپور میں اغوا کراکے سخت ترین تشدد کا نشانہ بنایا گیا تھا جس کی میں پولیس کو شکایت کی لیکن کوئی تدارک نہیں ہوا اس کے برعکس پولیس بااثر کے ساتھ ہے مجھے پولیس سے تعاون کا کوئی امید نہیں ہے ۔
انہوں نے سپریم کورٹ آف پاکستان کے چیف جسٹس، آئی جی سندھ پولیس، ڈی آئی جی سکھر، ایس ایس پی سکھر اور دیگر سے اپیل کی ہے کہ مجھ پر داخل جھوٹے مقدمات ختم کرکے میرے ساتھ انصاف کیا جائے ۔
مجھے اور میرے اہل خانہ کو مکمل تحفظ فراہم کیا جائے ورنہ دیگر صورت میں اپنے بال بچوں سمیت خود سوزی کروں گا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں