0

پنجگور(دی پنجگور ٹائمز) بارڈر کے کار و بار کے لیے گاڑیوں کی ٹرپ دو مہینے کس طرح آتے ہیں اصل حقائق سامنے آگیا، بڑے مرمچھ سیٹھوں اور سرمایا دار طبقے نے بارڈر کے کار و بار کو اپنے قبضے میں لے لیا سادہ لوگوں کے شناختی کارڈ

پنجگور(دی پنجگور ٹائمز) بارڈر کے کار و بار کے لیے گاڑیوں کی ٹرپ دو مہینے کس طرح آتے ہیں اصل حقائق سامنے آگیا، بڑے مرمچھ سیٹھوں اور سرمایا دار طبقے نے بارڈر کے کار و بار کو اپنے قبضے میں لے لیا سادہ لوگوں کے شناختی کارڈ سے اسٹیکر نکال رہے ہیں ہر ٹرپ پر پانچ سے دس ہزار شناختی کارڈ والوں کو دے رہے ہیں خود دوسروں کے شناختی کارڈ کے زریعے کمائی کررہے ہیں خوب فائدہ اٹھارہے ہیں غریب شناختی کارڈ والوں کو دھوکا دے کر پانچ سے دس ہزار دے رہے ہیں. پھر انہی غریب لوگوں کو 750 سے 2500 روپے دے کر کہتے ہیں شناختی کارڈ کی کاپی نکال کر نادرہ میں جاکر ایک نیا شناختی کارڈ نکالو اور وہاں کہہ دینا میرا شناختی کارڈ گُم ہوگیا ہے جب نیا شناختی کارڈ نکالتے ہیں تو پہلے والا شناختی کارڈ کو سیٹھ اپنے پاس رکھتے ہیں دوسری جانب انہی سرمایا دار طبقے کی گاڑیاں پیکج پر چل رہی ہیں ایک طرف پیکج دوسرے غریب گاڑی والوں کے لیے ددد سر بن گیا ہے دوسری جانب غریب لوگوں کے شناختی کارڈ پر ای ٹیگ اسٹیکر نکال رہے ہیں. انہی سرمایا دار طبقات کی وجہ سے مڈل طبقے کی گاڑیوں کے ٹرپ دو مہینے میں آتے ہیں انہی طبقات نے حق تلفی کی ہیں اب یہ نظام کیسے بدلے گا اس کے لیے ایک بڑا قدم اٹھانا پڑے گا. جن جن بڑے سیھٹوں نے کن کن کے ناموں سے اسٹیکر نکال دیئے گئے ہیں جلد ناموں اور شناختی کارڈز نمبر شائع کردیئے جائیں گے.

یہ خبر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں