0

*صدقہ الفطر* بدھ 03 اپریل 2024 انجینیئر نذیر ملک سرگودھا

*صدقہ الفطر*

بدھ 03 اپریل 2024
انجینیئر نذیر ملک سرگودھا

* صدقہ فطر فرض ہے
* صدقہ فطر کا مقصد روزے کی حالت میں سرزد ہونے والے گناہوں سے خود کو پاک کرنا ہے۔

*صدقہ فطر نماز عید سے قبل ادا کرنا چاہیے ورنہ عام صدقہ شمار ہوگا*

*صدقہ فطر کے مستحق وہی لوگ ہیں ،جو زکوۃ کے مستحق ہیں۔(احمد اور ابن ماجہ)*

* صدقہ فطر کی مقدار ایک صاع ہے ،جو پونے تین سیر یا ڈھائی کلوگرام کے برابر ہے۔

* صدقہ فطر ہر مسلمان غلام ہو یا آزاد مرد ہو یا عورت، چھوٹا ہو یا بڑا ،روزے دار ہو یا غیر روزے دار، صاحب نصاب ہو یا نہ ہو ،سب پر فرض ہے۔

حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے رمضان کا صدقہ فطر ایک صاع کھجور یا ایک صاع جو، غلام ،آزاد مرد ،عورت ،چھوٹے، بڑے ہر مسلمان پر فرض کیا ہے۔ (بخاری اور مسلم)

وضاحت: جس شخص کے پاس ایک دن خوراک کی خوراک میسر نہ ہو وہ صدقہ ادا کرنے سے مستشنی ہے۔

* صدقہ فطر غلہ کی صورت میں دینا افضل ہے ۔

حضرت ابو سعید رضی اللہ تعالی عنہ فرماتے ہیں کہ ہم صدقہ فطر ایک صاع غلہ یا ایک صاع جو ایک صاع کھجور یا ایک صاع پنیر یا ایک صاع منقہ دیا کرتے تھے ۔(بخاری اور مسلم)۔

صدقہ فطر ادا کرنے کا وقت آخری روزہ افطار کرنے کے بعد شروع ہوتا ہے ۔لیکن عید سے ایک یا دو دن پہلے ادا کیا جا سکتا ہے۔

*صدقہ فطر گھر کے سرپرست کو گھر کے تمام افراد بیوی، بچوں اور ملازموں کی طرف سے ادا کرنا چاہیے ۔

حضرت نافع رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ ابن عمر رضی اللہ تعالی عنہ گھر کے چھوٹے بڑے تمام افراد کی طرف سے صدقہ فطرہ دیتے تھے حتی کہ میرے بیٹوں کی ⁰طرف سے بھی دے دیتے تھے۔ اور ابن عمر رضی اللہ تعالی عنہ ان لوگوں کو بھی دیتے تھے جو قبول کرتے اور عید الفطر سے ایک یا دو دن پہلے دیتے تھے۔( بخاری)

*الدعا*
یا اللہ تعالی میرے روزے نمازیں، صدقات ذکواة اور نیک اعمال سب قبول فرما اور سب گناہ معاف فرما۔

آمین یارب العالمین

Please visit us at www.nazirmalik.com Cell 0092300860 4333

یہ خبر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں