1,625

ایک باہمت لڑکی نے حالات کا مقابلہ کرتے کرتے اپنی جان دے دی ۔ کل لاریٹس پبلک سکول اینڈ گروپس ملتان نزد انصاری چوک حارث کیمپس میں ایک واقعہ پیش آیا ۔ ایک ٹیچر جس کا نام اسماء عمر با مشکل 18 سال ہوگی

شجاعباد اوسی
۔ ایک باہمت لڑکی نے حالات کا مقابلہ کرتے کرتے اپنی جان دے دی ۔ کل لاریٹس پبلک سکول اینڈ گروپس ملتان نزد انصاری چوک حارث کیمپس میں ایک واقعہ پیش آیا ۔ ایک ٹیچر جس کا نام اسماء عمر با مشکل 18 سال ہوگی جوکہ ملتان سے تھوڑی دور قصبہ مڑل کی رہائشی تھی ۔ وہ حالات کا مقابلہ کرتے کرتے اپنی زندگی سے ہار گئ ۔ ہوا یوں کہ یہ میری بہن صرف سات ہزار روپے ہیں اس سکول میں پڑھاتی تھی ۔ جبکہ اس کے والد مسجد میں آذان دیتے تھے اور بھائ ایک کالج پڑھ رہا تھا ۔ اس کے سات ہزار سے بھائ کی تعلیم اور گھر کا خرچہ چلتا تھا ۔ وہ ملتان اپنے ماموں کے گھر رہتی تھی ۔
ہوا یوں کہ یہ جب سکول گئ
وی او
تو جونیئر سٹاف کی ہیڈ نے اس کی بہت بے عزتی کی ۔ اور کہا کہ تمہاری انگلش ٹھیک نہیں ایک تو تم پہ احسان کیا ہے ورنہ کون تم کو نوکری دیتا ۔ اب تم کو فارغ کرتی ہوں ۔ جب اس نے یہ سنا تو رونے لگ گئ ۔ اور کہنے لگی میم میری گھر کوئ کمانے والا نہیں ہے ۔ مجھے موقع دے دیں ۔ اور اس نے تمام سٹاف سے مدد مانگی کہ اس کی Help کریں ۔ سب نے یہ کہا کہ جاکر Cheif Executive چوہدری خالد جاوید وڑائچ کو کہو ۔ جوکہ جنوبی پنجاب Pti کے vice President ہیں ۔
یہ چپ ہوگئ ۔ سب کے سامنے بے عزتی کی وجہ سے جب Spoken English کا پیریڈ ہوا تو مس نرگس آئیں اور کہنے لگی کہ چلو میرے ساتھ سب کے سامنے Presentation دو ۔ صبح کی بے عزتی کی وجہ یہ پہلے بہت زیادہ سٹریس میں تھی یہ بولی کہ میم میں کل دے دوں گی Presentation تو میم بولی دینی ہے تو ابھی دو ورنہ اپنے گھر جائو پکی پکی جب اس نے یہ سنا تو تو چپ چپ ساتھ چل پڑی ۔ جب یہ روم میں داخل ہوئ تو صرف چند ہی الفاظ بول سکی اس کا ایک دم BP Low ہوگیا اور نیچے گرگئ ۔اور سر پہ چوٹ لگی ۔
دوسری ٹیچرز نے Ambulance بلانے کا کہا تو سکول کی Reputation کو مدنظر رکھتے ہوئے یہ فیصلہ کیا کہ خالد جاوید وڑائچ کی کار میں ہسپتال لے جاتے ہیں ۔ لیکن جس شخص کو کبھی میں انسان کے روپ میں فرشتہ سمجھتا تھا اس نے صاف انکار کر دیا کہ میری کار استعمال نہیں کی جائے ۔ پھر رکشہ منگوایا اور نشتر لے کر گئے لیکن موقع پہ طبی امداد نا ملنے کی صورت میں یہ بہن زندگی کی بازی ہار گئ ۔
ایک اور باہمت بیٹی دنیا چھوڑ گئ ۔ اب تو کچھ بول لو گونگے بہرے لوگو ۔ اس بچی کے انصاف کے لیئے آواز اٹھا لو ۔ ورنہ ایسے ہی جنازے اٹھتے رہیں گے یہ فرعون لوگ ہم غریبوں کو ایسے ہی مارتے رہیں گے ۔ چلو خاموش رہو لیکن ایک الحمد شریف اور تین قل شریف ہی پڑھ دو اس بہن کے لیئے ۔ 😿😿😿 خدا کے لیئے بس کردو ۔ ان سکول مافیا کو لگام ڈالو ۔ 😿😿😿
رپورٹ اظہر تاج قریشی

یہ خبر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں